وہی پارٹی زندہ رہتی ہے جس کی بنیاد نظریات پرہو:آرسی پی سنگھ

0
228
All kind of website designing

اسمبلی انتخابات کا نتیجہ ہمارے لئے چیلنج ہے اور ہمیں اس چیلنج کو موقع کی شکل میں بدلنا ہوگا:امیش کشواہا
جے ڈی یو کے تین روزہ تربیتی پروگرام کا افتتاح
محمد نعمت اللہ
پٹنہ،2 فروری :پارٹی کے تین روزہ تربیتی پروگرام کا افتتاح آج جے ڈی یو ہیڈ کوارٹر میں کرپوری آڈیٹوریم میں ہوا۔ پروگرام کا افتتاح قومی صدر آر سی پی سنگھ نے کیا اور مہمان خصوصی راجیہ سبھا کے ڈپٹی چیئرمین شری ہریونش نارائن سنگھ تھے۔پروگرام کی صدارت جے ڈی یو ٹریننگ سیل کے ریاستی صدر سنیل کمار نے کی جبکہ ریاستی صدر امیش سنگھ کشواہا ، سابق وزیر منگنی لال منڈل ، سابق ایم ایل سی رام وچن رائے ، سنجے کمار سنگھ عرف گاندھی جی ، للن صراف ، ترجمان سنجے سنگھ ، قومی سکریٹری رویندر سنگھ ، ریاستی جنرل سکریٹری ڈاکٹر نوین کمار آریا ، انل کمار ، جے ڈی یو میڈیا سیل کے ریاستی صدر ڈاکٹر امردیپ ، علاقائی انچارج چندن کمار سنگھ ، پرمہنس کمار ، ڈاکٹر وپن یادو ، کامکھیا نارائن سنگھ ، ارون کشواہا ، مسٹر آصف کمال ، رام غلام رام اور مرتنجے کمار سنگھ موجود تھے۔تربیتی پروگرام کے پہلے دن پروفیسر رام وچن رائے اور ہری ونش نارائن سنگھ’ عملی سوشلزم‘ ،موٹیویشنل اسپیکر نیاز احمدنے’داخلی تبدیلی‘، گاندھی اسمرتی درشن سمیتی کے اتل پریادرشی نے’عدم تشدد پرمبنی مواصلات‘ اور ٹریننگ سیل کے ریاستی صدر سنیل کمار نے’ڈیولپمنٹ لیڈرشپ ‘ کے موضوع پرخطاب کیا۔
اس موقع پر اپنے خطاب میں قومی صدر آر سی پی سنگھ نے کہا کہ وہی پارٹی زندہ رہتی ہے جو بنیادنظریات پرہو۔ ہماری کوشش ہے کہ ہر کارکن جے ڈی یو کےنظریات سے وابستہ ہر ایک چیز کو سمجھے۔ اسے یہ پتہ ہوکہ ہماری پارٹی دوسری پارٹیوں سے کس طرح مختلف ہے اور ہمارے قائد نتیش کمار کیسے بہترہیں۔ انہوں نے کہا کہ سوشلزم کی تاریخ بہت پرانی ہے۔ سوشلسٹ بہت جدوجہد کرتے تھے لیکن تنظیمیں تشکیل نہیں دے سکے۔ وزیراعلیٰ نتیش کمار کی قیادت میں ہم اس سلسلےکو توڑنے کے راستے پرگامزن ہیں۔ آج نہ صرف وہ۱۶؍ سال سے بہار کی لگام سنبھال رہے ہیں بلکہ آج ہماری تنظیم بھی ہر بوتھ پر ہے۔ اس طرح کے تربیتی پروگراموں کے ذریعے ہمیں اپنی تنظیم کو مزید مضبوط بنانا ہوگا۔ آر سی پی سنگھ نے کہا کہ ہمیںسماج میں مساوات کے ساتھ خوشحالی لانا ہوگی لیکن پرتشدد طریقہ کے بغیر۔ سوشلزم میں کسی بھی طرح کی تشدد کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ ہمیں سماج دشمن عناصر کی حوصلہ شکنی کرنی ہوگی۔ معاشرے کے نچلے حصے کو تبدیلی کا فائدہ ملنا چاہئے ۔ وزیر اعلی نتیش کمار نے گاندھی ، جے پی ، لوہیا ، امبیڈکر اور کرپوری کے نظریات کے مطابق عملی طور پر اس خیال کو ظاہر کیااوریہی عملی سوشلزم ہے۔ریاستی صدر امیش سنگھ کشواہا نے اپنے استقبالیہ خطاب میں کہا کہ اسمبلی انتخابات اور حکومت کی تشکیل کے بعد اس تربیتی پروگرام کا اہتمام کیا گیا ہے تاکہ ہمیں اپنے کارکنوں میں نئی توانائی پیدا کرنا پڑے اور انھیں نظریات کی طاقت دینی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کارکنوں میں جوش و خروش ظاہر کرنا ضروری ہے۔ اسمبلی انتخابات کا نتیجہ ہمارے لئے چیلنج ہے اور ہمیں اس چیلنج کو موقع کی شکل میں بدلنا ہوگا۔
مسٹر ہری ونش نارائن سنگھ نے عملی سوشلزم سے متعلق اپنے خطاب میں کہا کہ کسی ریاست کے وزیر اعلیٰ ہونے کے باوجود نتیش کمار کو پورے ملک میں پہچانا گیا اور ان کا کام نظیر بن گیا۔ لوگ سوچتے ہیں لیکن روڈ میپ نہیں بناتے ہیں مگر نتیش کمار جو سوچتے تھے اس کا روڈ میپ بھی لے کر آئے۔ انہوں نے جس طرح سے اپنے نظریات کو عملی جامہ پہنایا اور بہار کی ناقابل یقین ترقی کی ، اس سے بہتر سوشلزم کی عملی مثال کوئی اور نہیں ہوسکتی ہے۔ گاندھی کے سچے پیروکار کی طرح ان کا کام بولتا ہے۔ ان کے کام کا کوئی دوسرا آپشن نہیں ہے۔ آج ہم سوچ بھی نہیں سکتے کہ اگر نتیش کمار 2005 سے 2021 تک بہار کے وزیر اعلی نہ ہوتے تو کیا ہوتا۔ عملی سماجیات پر گفتگو کرتے ہوئے رام وچن رائے نے کہا کہ خدمت ، ساکھ ، دور اندیشی ، قابلیت ، استعداد ، تدبر ، نرمی ، سادگی ، ہم آہنگی اور قربانی عملی سوشلزم کے کلیدی عناصر ہیں۔ ان معیارات کی بنیاد پرنتیش کمار کی عملی سوشلزم کو سمجھا جاسکتا ہے۔ ان کی سیاسی کامیابی کی بنیاد میں ان کی عملی سوشلزم کے یہ عناصر کسی نہ کسی طرح سے موجود ہیں۔ٹریننگ سیل کے ریاستی صدر سنیل کمار نے قائدانہ ترقی کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ جے ڈی یو کے ہر کارکن خوداحتسابی کرے کہ اس میںکتنی خوداعتمادی اور صلاحیت ہے۔ اس کے بعد وہ پارٹی کی بنیاد کو مضبوط اور وسعت دینے میں کامیاب ہوں گے تھی بہتر نتیجہ حاصل ہوگا۔

نیا سویرا لائیو کی تمام خبریں WhatsApp پر پڑھنے کے لئے نیا سویرا لائیو گروپ میں شامل ہوں

تبصرہ کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here