احتجاج کس کے خلاف ہونا چاہئےعوام کےیا سرکارکے!

0
335
All kind of website designing

ڈاکٹر ویدپرتاپ ویدک

عوامی احتجاج سے متعلق سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلے سے ان درخواست گزاروں کو مایوسی ہوئی ہوگی جو احتجاج کے حق کے لئے لڑ رہے ہیں۔ اگر عوام کو کسی ریاست میں احتجاج کرنے کا حق نہیں ہے تو پھر وہ جمہوریت نہیں ہوسکتی ہے۔ مخالفت یا احتجاج جمہوریت میں موٹر کار میں بریک کی طرح ہے۔ بغیر احتجاج کے جمہوریت ایک بغیربریک کی کار کی طرح ہے۔ عدالت نے احتجاج ، دھرنوں ، بھوک ہڑتالوں ، جلوسوں وغیرہ کو ہندوستانی شہریوں کا بنیادی حق سمجھا ہے، لیکن اس میں یہ بھی واضح طور پر کہا گیا ہے کہ اگر حکومت سے زیادہ دیر تک لوگوں کو تکلیف پہنچتی ہے تو مذکورہ بالا تمام اقدامات روکنے  کاحکومت کو حق ہے۔
اس معاملے میں عدالت کی یہ بات بالکل سچ ہے ، کیونکہ اگر عوام کسی کے بھی حقہ پانی کو روکتی ہے تو ، یہ اس کے بنیادی حقوق کی بھی خلاف ورزی ہے۔ یہ حکومت کی نہیں عوام کی مخالفت ہے۔ مظاہرین تعداد میں محدود ہیں لیکن ان کے اجتماعات سے لاتعداد افراد کی آزادی کو خلل پڑتا ہے۔ لاکھوں لوگوں کو طویل فاصلے کے راستوں

Dr. Ved Pratap Vaidik

سے گزرنا پڑتا ہے، دھرناکے قریب فیکٹریاں اور سیکڑوں چھوٹے تاجروں کی دکانیں تباہ ہوجاتی ہیں۔ ہسپتال پہنچتے پہنچتے سنگین مریض دم توڑ جاتے ہیں۔ اگر شاہین باغ اور کسان جیسے دھرنے ہفتوں تک چلتے رہیں تو ملک کو اربوں روپے کانقصان ہوتا ہے۔ ریل روکومہم روڈ بلاکس سے بھی زیادہ تکلیف دہ ثابت ہوتی ہے۔ ایسے مظاہرین عوامی ہمدردی سے بھی محروم ہوجاتے ہیں۔ کوئی ان سے پوچھے ، آپ کس کے خلاف احتجاج کررہے ہیں ،سرکارکے خلاف یاعوام کے خلاف؟
اس طرح کا دھرنا دینے سے پہلے پولیس کی اجازت لینا ضروری ہو گی، بصورت دیگر پولیس انہیں ہٹادے گی۔ پتہ نہیں دہلی بارڈر پر طویل دھرنے پر بیٹھے کسان عدالت کی سنیں گے یا نہیں۔ اگر ان دھرنوں اور جلوسوں سے سڑکیں ایک سے دو گھنٹے کے لئے بند کردی جاتی ہیں اور کچھ عوامی مقامات پر مظاہرین کا قبضہ ہوجاتاہے تو پھر کوئی حرج نہیں ہے ، لیکن اگر یہ طویل دھرنے انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا باعث بنیں گے تو پھر پولیس کارروائی جائز ہوگی۔
میں نے پچھلے 60-65 سالوں میں اس طرح کے دھرنوں ، مظاہروں ، جلوسوں کے علاوہ خودکئی بار بھوک ہڑتال کئے ہیں ، لیکن اندور ، دہلی ، لکھنؤ ، وارانسی ، بھوپال ، ناگپور وغیرہ شہروں کی پولیس نے ان پر کبھی بھی لاٹھی چارج نہیں کیا۔ مہاتما گاندھی نے یہی سکھایا ہے کہ ہمیں اپنی پرفارمنس کو ہمیشہ غیر متشدد اور نظم و ضبط میں رکھنا چاہئے۔ ان کے ذریعہ چوری چورا تحریک روکنے کی وجہ یہی تھی کہ وہاں احتجاجیوں نے قتل اورتشددکاارتکاب کیاتھا۔
(مضمون نگار مشہور صحافی اور کالم نگار ہیں)

نیا سویرا لائیو کی تمام خبریں WhatsApp پر پڑھنے کے لئے نیا سویرا لائیو گروپ میں شامل ہوں

تبصرہ کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here