حیدر آباد: سکریٹریٹ کی دو مساجد کے انہدام کے خلاف تعمیر ملت برہم

0
880
حیدر آباد سکریٹریٹ کے دفتر معتمدی کے قریب واقع مسجد اور دوسری تصویر میں اس کے شہید کئے جانے کا دلدوز منظر
حیدر آباد سکریٹریٹ کے دفتر معتمدی کے قریب واقع مسجد اور دوسری تصویر میں اس کے شہید کئے جانے کا دلدوز منظر
All kind of website designing

وزیر داخلہ و دیگر مسلم قائدین اپنے عہدوں سے استعفیٰ دیں: سید جلیل احمد کا مطالبہ

حیدرآباد : رسیات تلنگانہ سکریٹریٹ میں واقع دو مساجد کی شہادت کے المناک واقعہ پر شدیدبرہمی اورسخت رنج و ملال و صدمہ کا اظہار کرتے ہوئے کل ہند مجلس تعمیر ملت نے چیف منسٹرشری کے چندر شیکھر راؤ سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنی غلطی و کوتاہی پر ندامت کا اظہار کرتے ہوئے ان مساجد کی دوبارہ تعمیر کریں۔ صدر کل ہند مجلس تعمیر ملت سید جلیل احمد ایڈوکیٹ نے مساجد کے انہدام کی اطلاعات پر شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ

سید جلیل احمد ایڈوکیٹ
سید جلیل احمد ایڈوکیٹ

مساجد کا انہدام نادانستہ طور پر انجام دی گئی کارروائی نہیں ہے، بلکہ حکومت کی سوچی سمجھی حرکت ہے۔ جس کے ذریعہ چیف منسٹر نے ریاست ہی نہیں بلکہ ملک بھر کے مسلمانوں کی دل آزاری کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شری کے سی آر انانیت کی طرف بڑھتے جارہے ہیں اور ریاست کے عوام کے مذہبی جذبات و احساسات کے احترام کا جذبہ ختم ہوچکا ہے۔ ہندو مسلمان کو اپنی دو آنکھیں سمجھنے والے چیف منسٹر اس بات سے بخوبی واقف ہیں کہ مسلمان مسجد کو کس قدر اہمیت دیتے ہیں اور اس بات سے بھی کہ کسی مقام پر مسجد تعمیر ہونے کے بعد وہ جگہ قیامت تک مسجد ہی رہتی ہے اور اس کو وہاں سے ہٹایا نہیں جاسکتا۔ وہ اس بات سے بخوبی واقف ہیں کہ بابری مسجد کا مقدمہ بھی اسی ایک نکتہ کی وجہ سے کئی دہوں تک چلتا رہا اوراس تنازعہ کے باعث ہزاروں مسلمان اپنی جان و مال سے ہاتھ دھو بیٹھے ۔ ان کے علم میں یہ بات بھی ہے کہ ریاست میں سڑکوں کی توسیع کے موقعہ پر جو مساجد منہدم کی گئیں اس کے خلاف مسلمانو ں اور ان کے قائدین نے کس قدر احتجاج کیا تھا۔ سنگا ریڈی کے قریب متنگی کی مسجد اور شہر میں مسجد یک خانہ عنبر پیٹ کے انہدام پر مسلمانوں کااحتجاج ،کیا انہیں یاد نہیں۔ سید جلیل احمد نے کہا کہ پہلے تو سکریٹریریٹ کی مساجد کو بند کردیا گیا اور اب موقع پا کر انہیں راتوں رات منہدم کردیا گیا۔انہوں نے یا ددلایا کہ مساجد کے انہدام کے تعلق سے ایک عرصے سے اندیشے تھے اور ان اندیشوں پر اس وقت کے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے یقین دہانی کرائی تھی کہ ایسا کچھ نہیں ہوگا۔ لیکن اب سب کچھ ہوچکا ہے، انہو ںنے الزام لگایا کہ چیف منسٹر بی جے پی کے مقابلے میں اپنی مقبولیت میں اضافہ کے لئے ہر وہ کام کررہے ہیں جو شاید بی جے پی بھی نہ کرتی۔ انہوں نے پارلیمنٹ میں مسلم مخالف قوانین کی تائید و حمایت کی۔ مسلم ریزرویشن کا ڈرامہ اس خوبی سے کھیلا کہ کسی کو شک تک نہ ہو اور اس طرح وہ مسلمانوں کو بے وقوف بناتے رہے۔ بابری مسجد کے انہدام اور رام مندر کی بنیاد رکھنے والے ان کے ہیرو پی وی نرسمہا راؤ کی صد سالہ تقاریب کا اعلان کرتے ہوئے انہوں نے اپنی ذہنیت کا مظاہرہ کیا ہے۔ تعمیر ملت نے کہا ہے کہ اب جبکہ چیف منسٹر کھل کر سامنے آچکے ہیں تو ٹی آر ایس سے وابستہ تمام مسلم قائدین جن میں ذرا برابر بھی دینی غیرت و حمیت ہے سرکار اور کے سی آر کی پارٹی سے علیحدہ ہوجائیں، نہ صرف وزیر داخلہ محمود علی بلکہ سرکاری اداروں پر فائز قائدین بھی بورڈ اور کمیٹیوں کی صدارت اور رکنیت سے فوری اپنے استعفے کا اعلان کرتے ہوئے ملت کے درد، جذبات و احساسات کا احترام کریں۔ جس طرح بابری مسجد کے انہدام کے بعد مسلمانوں نے محض عہدوں سے چمٹے رہنے کی خاطر کانگریس سے علیحدگی اختیار نہیں کی تھی، اسی طرح اگر ٹی آ رایس اور اس کی حکومت کو حمایت دینے والی پارٹیوں کے قائدین بھی عہدو ں سے چمٹے رہیں تو انہیں یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہئے کہ اب وہ مسلم کانگریس قائدین کہا ں ہیں جنہوں نے اپنے ضمیر کا سودا کرتے ہوئے کانگریس پارٹی سے چمٹے رہنے کو ترجیح دی تھی۔ ٹی آر ایس کے مسلم قائدین اپنی دینی حمیت کا مظاہرہ کریں تا آں کہ چیف منسٹر اپنے فیصلہ پر نظر ثانی نہ کرلیں۔

 

نیا سویرا لائیو کی تمام خبریں WhatsApp پر پڑھنے کے لئے نیا سویرا لائیو گروپ میں شامل ہوں

تبصرہ کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here